November 24th, 2020 (1442ربيع الثاني8)

عقیدۂ ختم نبوت پرایمان، نجات و مغفرت اورحصولِ جنت کا ذریعہ ہے:دردانہ صدیقی

عقیدۂ ختم نبوت، مسلمانوں کے ایمان کی اساس اور روح ہے۔ اگر اس پر حرف آجائے تو اسلام کی ساری عمارت بیٹھ جائے گی ۔ اللہ تعالیٰ نے آقائے دو جہاں  سیدنا محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے سرِ اقدس پر تاجِ ختمِ نبوّت سجا کر اس  دنیا میں مبعوث فرمایا۔ حضور خاتم النبیین صلی اللہ علیہ وسلم کے ذریعے بنی نوعِ انسان کو عقیدۂ توحید کی عظیم نعمت عطا فرمائی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے منصبِ ختم نبوّت پر ایمان، نجات و مغفرت اور حصولِ جنت کا ذریعہ ہے۔  ان خیالات کا اظہار جماعت اسلامی حلقہ خواتین پاکستان کی سیکرٹری جنرل دردانہ صدیقی نے 7 ستمبر   "یوم ختم نبوت "  کے حوالے سے اپنے ایک بیان میں کیا-              

انہوں نے کہا کہ پاکستان کی پارلیمانی تاریخ میں 7 ستمبر ایک عہد ساز دن ہے جسے یوم تحفظ ختم نبوت اور یومِ تجدید عہد قرار دیا گیا ہے۔ اس روز عقیدہ ختم نبوت ﷺ اور ناموس رسالت کے تحفظ کی سو سالہ طویل ترین جد وجہد ، فتح مبین سے ہمکنار ہوئی۔ 7 ستمبر 1974 کو پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کے مشترکہ اجلاس میں متفقہ طور پر قادیانیوں کو غیر مسلم اقلیت قرار دیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ 1974ء ميں وزیر اعظم پاکستان جناب ذوالفقار علی بھٹو کے دور میں  قادیانیوں کوغیر مسلم اقلیت قرار دے دیا گیا، اس تحریک کے اصل محرک شاہ احمد نورانی تھے انہوں نے 30 جون کو ایک تاریخی قرارداد جمع کرائی  جس میں احمدیوں کو واضح طور پر آئین پاکستان نے غیر مسلم قرار دیا ہے، اسے آرڈیننس 20 کہا جاتا ہے۔                      انہوں نے مزید کہا کہ   ۷؍ ستمبر مسلمانوں کے لیے تجدیدِ عہد کا دن ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ مسلمان عقیدۂ ختمِ نبوّت ﷺ کے تحفظ کی جدوجہد کو پوری قوت سے جاری رکھیں اور پرچمِ ختمِ نبوّت ﷺ ہمیشہ  لہراتا رہے ۔ آج یوم ختمِ نبوّت ﷺ پر یہ عہد کرنا  ہو گا کہ منکرین ختم نبوت کی دین و ملک دشمن سرگرمیوں کی بنیاد  پر ان پر پابندی عائد کرکے اسے خلافِ قانون قرار دیا جائے۔مسلمان سنت نبوی  ﷺ کی روشنی میں  اپنے کردار کو سنواریں  اور اسوہ رسول کے مطابق اپنی زندگیوں کو اس طرح ڈھالیں کہ شر کے خلاف سیسہ پلائ دیوار بن جائیں .