October 20th, 2017 (1439محرم29)

کیا اطلاع دیکر حملہ درست ہے ؟

 

امریکا نے پاکستان کے علاقے پر ایک اور ڈرون حملہ کردیا جس کے جواب میں پاکستان نے امریکا کے ساتھ تعلقات پر نظر ثانی کرتے ہوئے امریکی حکام کے دوروں کے مواقع پر ان کے پروٹوکول میں تبدیلی کردی ہے۔ امریکیوں کے لیے ضابطے سخت کرنے کے ساتھ ساتھ ترکی، چین اور سعودی عرب کے لیے ضوابط نرم کرنے کا اعلان کیاگیا ہے۔ ایسا تاثر دیا جارہا ہے کہ کرم ایجنسی میں بغیر اطلاع ڈرون حملے پر پاکستان نے احتجاج کیا ہے اور اس کے نتیجے میں امریکی افسران و عہدیداروں سے ملاقاتوں اور ان کے وزرا کے دوروں کے حوالے سے پروٹوکول تبدیل کردیا ہے۔اب جس عہدے کا افسر آئے گا اس عہدے کا افسر ملاقات کرے گا۔ دوسری طرف امریکی حکومت کی جانب سے پاکستان کے خلاف اقدامات کی تیاریوں کی خبریں سامنے آرہی ہیں غرض ایسا لگ رہا ہے کہ پاکستان اورامریکا کے درمیان تعلقات کشیدگی کی انتہاؤں کو پہنچ رہے ہیں۔ لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ امریکا کے ڈرون حملے میں تین افراد کی شہادت پر اتنا سخت ردعمل کیوں اس سے قبل امریکی ڈرون حملوں اور دیگر حملوں میں پاکستان میں بیک وقت ایک ہی مدرسے کے 80 بچے شہید ہوچکے ہیں لیکن اس وقت ایسا کوئی قدم کیوں نہیں اٹھایا گیا۔ بظاہر یہ بتایا جارہا ہے کہ امریکی حکومت نے کرم ایجنسی میں ڈرون حملے کی اطلاع نہیں دی تھی تو کیا اطلاع دے کر یہی کارروائی کی جاتی تو پاکستان کا ردعمل کچھ اور ہوتا۔ اطلاع دے کر پاکستانی علاقے میں بمباری کرنا اور پاکستانیوں کو شہید کرنا کیسے جائز ہوسکتا ہے۔ اور بغیر اطلاع یہی عمل کرنے پر ناراض ہونے کی کوئی تو جیح بھی نہیں کی جاسکتی۔ یہی اصول اگر تسلیم بھی کرلیا جائے تو امریکیوں نے کرم ایجنسی سے قبل بھی بہت سے حملے پاکستانی علاقوں میں پاکستانی حکومت کو اطلاع دیے بغیر ہی کیے تھے۔ ان سب کو چھوڑیں پاکستانی حکمرانوں کا دعویٰ ہے کہ امریکا نے ایبٹ آباد کا آپریشن ہماری اطلاع کے بغیر کیا ہےاگر چہ امریکی کہتے رہے کہ ہم نے اطلاع دیدی تھی لیکن پاکستانیوں کا یہی موقف رہا کہ ہمیں اطلاع نہیں دی تھی۔ اس آپریشن میں بھی یہ مسئلہ اپنی جگہ ہے کہ اگر اطلاع دیدی ہوتی تو کیا پاکستانی حکومت اور فوج امریکی کارروائی کو روک لیتی۔ یہ اور بات ہے کہ ایبٹ آباد آپریشن کی امریکی کہانی کے جھوٹ بلکہ 9/11 کے بعد کے سب سے بڑے جھوٹ ہونے کے زیادہ شواہد ہیں۔ لیکن فی الحال بات یہ ہورہی ہے کہ امریکا کے خلاف پاکستانی حکومت نے جو اقدامات کیے ہیں ان کی اس حوالے سے کیا حیثیت ہے جو امریکا پاکستان کے خلاف کررہا ہے۔ امریکا تو پاکستان کا غیر نیٹو اتحادی کا درجہ ختم کررہا ہے۔ اسے دہشت گردوں کی پشت پناہ ملک قرار دینے کی بات کررہا ہے۔ اس کے نتیجے میں پاکستان کو ہتھیاروں کی فروخت اور آئی ایم ایف کے قرضے ملنے میں بھی مشکلات ہوسکتی ہیں۔ جبکہ پاکستانی حکام یہ تاثر دے رہے ہیں کہ ہم نے امریکا کو سبق سکھا دیا ہے۔ اگر امریکی وزیر سے پاکستانی ہم منصب ملے یا سیکرٹری سے ہم منصب ملے تو یہ کون سی سختی ہے۔ یہ تو کسی بھی ملک کا پروٹوکول ہوسکتا ہے۔ کبھی کبھی چھوٹے سے ملک کے لیے پروٹوکول تبدیل کرکے سعودی بادشاہ بھی ملنے پہنچتے رہے ہیں اور کبھی کبھی بڑے ملک کے سربراہ کے لیے وزیر جاتا رہا ہے اس کا مطلب احتجاج نہیں ہے۔ یہ تاثر دے کر پاکستانی حکومت یا طاقت کے مراکز یہ بتانا چاہتے ہیں کہ ہم امریکا سے دبنے والے نہیں لیکن ایسا کام کرکے امریکا کو دبایا نہیں جاسکتا۔ امریکی الزامات اور متوقع اقدامات کو سامنے رکھیں تو صورتحال خطرناک نظر آرہی ہے۔ امریکی محکمہ خارجہ کا ایک معمولی افسر الزام لگا رہا ہے کہ پاکستان میں 20 دہشت گرد تنظیمیں سرگرم ہیں۔ ہم خطے کے لیے خطرہ بنے ہوئے دہشت گردوں کے خلاف پاکستان کے اقدامات چاہتے ہیں۔ لیکن پاکستانی کی دفتر خارجہ یا وزیر خارجہ سمیت کسی حکومتی ذمے دار، پاک فوج اور آئی ایس آئی نے یہ نہیں کہا کہ ساری دنیا کی دہشت گرد تنظیموں کی فنڈنگ کرنے والے ادارے امریکا میں موجود ہیں
یہ تنظیمیں امریکا میں بھی موجود ہیں اور بہت سی تنظیموں کو خود امریکی حکومت امداد دیتی ہے۔ پاکستان کی طرف سے یہ ثابت بھی کیا جاسکتا ہے کہ کون کون سی امریکی تنظیم پاکستان میں دہشت گردی میں ملوث ہے لیکن 20 کے جواب میں یہاں سے دو کا نام بھی نہیں لیا جاتا۔ جب ریمنڈ ڈیوس پاکستان میں گرفتار تھا اس وقت امریکیوں کے اوسان خطا تھے وہ حواس باختہ تھے ایک جاسوس کے لیے امریکی وزیر خارجہ دوڑے دوڑے پھررہے تھے اور بالآخر وہ ریمنڈ ڈیوس کو واپس لے گئے۔اگر پاکستانی ادارے امریکی جاسوس نیٹ ورک کو پکڑنا چاہیں تو دو دن میں اس نیٹ ورک کو پکڑ سکتے ہیں لیکن ایسا نہیں کیا جاتا۔ امریکا کے ساتھ پروٹوکول میں سختی اور ترکی، چین اور سعودی عرب کے لیے نرمی کے فیصلے سے اب کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ یہ کام تو 9/11 کے بعد امریکی چڑھائی کے وقت کرنا چاہیے تھا۔ اسلامی ملکوں اور امریکا مخالف ممالک کو رعایتیں دیکر کوئی تو اتحاد یا بلاگ بنانا چاہیے تھا۔ پاکستانی قوم یہ سمجھنے سے قاصر ہے کہ اطلاع دے کر پاکستانی علاقے پر حملہ کرنا کیوں کہ جائز ہوسکتا ہے اور بغیر اطلاع حملہ کرنے پر محض سفارتی اقدامات کے کیا معنی ہیں۔ اگر کوئی ڈرون پاکستانی حدود میں اطلاع کے بغیر داخل ہورہا ہے تو اس کا وہی حشر ہونا چاہیے جو ترکی نے روسی طیارے کا کیا تھا۔ کیا اس کے بعد ترکی نے روس پر حملہ کردیا ؟؟ اسے تباہ کردیا؟؟ ایسا تو نہیں ہوا کچھ ماہ کی کشیدگی کے بعد اب دونوں ملکوں کے تعلقات بحالی کی طرف جارہے ہیں اور وہ امریکا مخالف اتحاد ہی میں ہیں۔ لہٰذا اگر پاکستانی حکمران کوئی ٹھوس قدم اٹھانا چاہتے ہیں اور امریکی جنگ سے باہر نکلنا چاہتے ہیں تو ایک مرتبہ گو امریکا گو کہنا پڑے گا۔ امریکی جاسوس نیٹ ورک پکڑنا ہوگا۔ امریکی فنڈنگ سے چلنے والے غیر ملکی اداروں کے خلاف کارروائی کرنا ہوگی۔ امریکا جیسے ملک کے ساتھ محض لفظی جنگ کا پاکستان کو نقصان ہوگا۔ دنیا بہر حال امریکا کے شکنجے میں ہے پاکستان نے کوئی ایسا گروپ بھی تیار نہیں کیا اور اپنی پوزیشن سے فائدہ بھی نہیں اٹھایا اور نہ ہی پاکستانی قیادت اتنی جرأت مند ،باشعور اور سمجھدار ہے کہ امریکیوں کو نکیل ڈال سکے۔
یہ تنظیمیں امریکا میں بھی موجود ہیں اور بہت سی تنظیموں کو خود امریکی حکومت امداد دیتی ہے۔ پاکستان کی طرف سے یہ ثابت بھی کیا جاسکتا ہے کہ کون کون سی امریکی تنظیم پاکستان میں دہشت گردی میں ملوث ہے لیکن 20 کے جواب میں یہاں سے دو کا نام بھی نہیں لیا جاتا۔ جب ریمنڈ ڈیوس پاکستان میں گرفتار تھا اس وقت امریکیوں کے اوسان خطا تھے وہ حواس باختہ تھے ایک جاسوس کے لیے امریکی وزیر خارجہ دوڑے دوڑے پھررہے تھے اور بالآخر وہ ریمنڈ ڈیوس کو واپس لے گئے۔اگر پاکستانی ادارے امریکی جاسوس نیٹ ورک کو پکڑنا چاہیں تو دو دن میں اس نیٹ ورک کو پکڑ سکتے ہیں لیکن ایسا نہیں کیا جاتا۔ امریکا کے ساتھ پروٹوکول میں سختی اور ترکی، چین اور سعودی عرب کے لیے نرمی کے فیصلے سے اب کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ یہ کام تو 9/11 کے بعد امریکی چڑھائی کے وقت کرنا چاہیے تھا۔ اسلامی ملکوں اور امریکا مخالف ممالک کو رعایتیں دیکر کوئی تو اتحاد یا بلاگ بنانا چاہیے تھا۔ پاکستانی قوم یہ سمجھنے سے قاصر ہے کہ اطلاع دے کر پاکستانی علاقے پر حملہ کرنا کیوں کہ جائز ہوسکتا ہے اور بغیر اطلاع حملہ کرنے پر محض سفارتی اقدامات کے کیا معنی ہیں۔ اگر کوئی ڈرون پاکستانی حدود میں اطلاع کے بغیر داخل ہورہا ہے تو اس کا وہی حشر ہونا چاہیے جو ترکی نے روسی طیارے کا کیا تھا۔ کیا اس کے بعد ترکی نے روس پر حملہ کردیا ؟؟ اسے تباہ کردیا؟؟ ایسا تو نہیں ہوا کچھ ماہ کی کشیدگی کے بعد اب دونوں ملکوں کے تعلقات بحالی کی طرف جارہے ہیں اور وہ امریکا مخالف اتحاد ہی میں ہیں۔ لہٰذا اگر پاکستانی حکمران کوئی ٹھوس قدم اٹھانا چاہتے ہیں اور امریکی جنگ سے باہر نکلنا چاہتے ہیں تو ایک مرتبہ گو امریکا گو کہنا پڑے گا۔ امریکی جاسوس نیٹ ورک پکڑنا ہوگا۔ امریکی فنڈنگ سے چلنے والے غیر ملکی اداروں کے خلاف کارروائی کرنا ہوگی۔ امریکا جیسے ملک کے ساتھ محض لفظی جنگ کا پاکستان کو نقصان ہوگا۔ دنیا بہر حال امریکا کے شکنجے میں ہے پاکستان نے کوئی ایسا گروپ بھی تیار نہیں کیا اور اپنی پوزیشن سے فائدہ بھی نہیں اٹھایا اور نہ ہی پاکستانی قیادت اتنی جرأت مند ،باشعور اور سمجھدار ہے کہ امریکیوں کو نکیل ڈال سکے۔