December 11th, 2018 (1440ربيع الثاني4)

امیر جماعت اسلامی سینٹر سراج الحق کا جماعت اسلامی حلقہ خواتین پشاور کے اجتماع عام سے خطاب

امیر جماعت اسلامی سینٹر سراج الحق نے آج پشاور میں جماعت اسلامی حلقہ خواتین پشاور کے اجتماع عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جماعت اسلامی کی دعوت بہت عام ، فطری اور سادہ سی ہے کہ اللہ کی بنائی ہوئی زمین پر اللہ کا بنایا ہوا نظام چاہئے۔ انھوں نے کہا کہ اگر آج کے اجتماع سے جانے کے بعد آپ لوگ اس بات کو سمجھ گئے تو میں سمجھوں گا کہ میں کامیاب ہوا۔ سراج الحق صاحب نے کہا کہ میں چاہتا ہوں کہ اس ملک وہ نظام حکومت ہو جس میں چیف جسٹس کی میز پر قرآن ہو ۔ جماعت اسلامی صرف حکومت حاصل نہیں کرنا چاہتی بلکہ وہ نظام بدلنا چاہتی اگر ہمیں ایسا ہی پاکستان چاہیے تھا جہاں اسلامی نظام حکومت نافذ نہ ہو۔تو لاکھوں انسانوں کی قربانی کی ضرورت نہ تھی۔اتنی بڑی قربانیاں صرف اسلامی نظام حیات کے قیام کے لٸے دی گٸ تھی۔ ۔ اجتماع عام سے نائب ناظمہ صوبہ جماعت اسلامی حلقہ خواتین حمیرا طیبہ نے بھی خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جب ہمارے  دلوں میں اسلام بھرا ہے تو ہمارے معاشرے ،بازاروں اور عدالتوں میں اسلام نظر نہیں آرہا ۔ اسکی وجہ اسلام بیزار حکمران ہے۔ اس لئے زمام کار ایسے حکمرانوں سے لیکر صالح افراد کو دی جائے۔  انھوں نے شرکاء کو جماعت اسلامی کا تعارف دیا اور کہا کہ ھم تمام خواتین کو دعوت دیتے ہیں کہ وہ جماعت اسلامی میں شمولیت اختیار کرکے اللہ کی مکمل بندگی اختیار کر لیں۔ آخر میں شام اور اصلاح معاشرہ پر مبنی قراردادیں بھی پیش کی گئی جن کو متفقہ طور پر منظور کر لیا گیا جس میں مطالبہ کیا گیا تھا کہ معصوم بچوں اور بچیوں کے تحفظ کیلئے قانون سازی کی جائے ۔ عدالتیں فوری اور سستا انصاف فراہم کریں ۔ الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا فحاشی کو پھیلانے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے پیمرا کو اس نوٹس لینا چاہئے ۔ مسلم ممالک کے حکمرانوں کو مسلے کی سنگینی کا احساس دلایا جائے۔پاکستان ترکی کے ساتھ مل کر اس آگ کو بجھانے کیلئے کوشش کرے ۔